پیٹرول کی قلت کی حقیقت جانیئے

پنجاب بھر میں چھ روز بعد بھی پیٹرول جو کہ آج کل کے دور کی بنیادی ضرورت ہے غائب ہے ۔ اور جو کوئی لمبی قطاروں میں لگ کر تھوڑا بہت پیٹرول حاصل بھی کرلے تو وہ اپنے آپ کو خوش قسمت سمجھتا ہے ۔
پی ایس او کہتی ہے کہ ملکی ادارے ہمیں ادائیگی نہیں کرتے جس کی وجہ سے سرکل صحیح نہیں چلتا اور یہ بات کافی حد تک صحیح بھی ہے ۔
آخر پی آئی اے جب ہمیں ادھار ٹکٹ نہیں دیتی تو ادھار پیٹرول لے کر ہمارا جینا کیوں حرام کرتی ہے ؟
جب واپڈا ہم سے نقد بل لیتی ہے تو پھر پیٹرول کے پیسے کیوں نہیں دیتی ، بجلی تو خیر انہوں نے ہمیں دینی نہیں اور اب انکی وجہ سے ہمارے ملکی پیٹرول کی قلم پیدا ہو گئی ہے ۔
6ea9ab1baa0efb9e19094440c317e21bمیاں صاحب سعودی عرب سے واپسی پر دو شاپر پیٹرول تحفتاً لے آیئے گا کیوں کے اب یہ چیز پاکستان میں نا پید ہو گئی ہے ۔
لوگ گاڑیاں گھسیٹ رہے ہیں تو کوئی موٹر سائیکلوں کو ٹیرھا کیے سڑک کنارے بیٹھیں ہیں ۔
اب تو ہمیں سائیکل لینی پڑے گی ، ویسے اگر عوام سائیکلوں پر سفر شروع کر دے تو وقت کی پابند بھی ہو جائے گی اور پہلے سے زیادہ چاکو چوبند بھی کیا خیال ہے آپ کا ۔۔۔ کیوں کے حکومت تو عوام کی ہوتی ہے ، تو آپ سے ہی پوچھیں گے نہ ہم
اور اس قلت میں کئی غریب لوگوں کا بھی بھلا ہو گیا جو اب امیروں کو 300 روپے لیٹر تیل بیچ کر لوٹ رہے ہیں ( اب آیا نہ اونٹ پہاڑ کے نیچے )